×

Warning

JUser: :_load: Unable to load user with ID: 830

51۔ عجز و زاری کے سلسلہ میں دعا

October 24, 2013 637

اے میرے معبود! میں تیری حمد وستائش کرتا ہوں اور تو حمد وستائش کا سزاوار ہے اس بات پر کہ تو نے میرے ساتھ اچھا سلوک کیا مجھ

پر اپنی نعمتوں کو کامل اور اپنے عطیوں کو فراواں کیا اور اس بات پر کہ تو نے اپنی رحمت کے ذریعہ مجھے زیادہ سے زیادہ دیا اور نعمتوں کو مجھ پر تمام کیا ۔ چنانچہ تو نے مجھ پر وہ احسانات کیے ہیں جن کے شکریہ سے قاصر ہوں ۔ اور اگر تیرے احسانات مجھ پر نہ ہوتے اور تیری نعمتیں مجھ پر فراواں نہ ہوتیں تو میں نہ اپنا حظہ ونصیب فراہم کر سکتا تھا اور نہ نفس کی اصلاح ودرستی کی حد تک پہنچ سکتا تھا لیکن تو نے میرے حق میں اپنے احسانات کا آغاز فرمایا اور میرے تمام کاموں میں مجھے ( دوسروں سے) بے نیازی عطا کی ۔ رنج وبلا کی سختی مجھ سے ہٹا دی اور جس حکم قضا کا اندیشہ تھا اسے مجھ سے روک دیا۔ اے میرے معبود! کتنی بلاخیز مصیبتیں تھیں جنہیں تو نے مجھ سے دور کر دیا اورکتنی ہی کامل نعمتیں تھیں جن سے تو نے میری آنکھوں کی خنکی وسرور کا سامان کیا ۔ اور کتنے ہی تو نے مجھ پر بڑے احسانات فرمائے ہیں ۔ تو وہ ہے جس نے حالت اضطرار میں میری دعا قبول کی اور (گناہوں میں ) گرنے کے موقع پر میری لغزش سے درگزر کیا اور دشمنوں سے میرے ظلم وستم سے چھنے ہوئے حق کو لے لیا۔ بارالہا! میں نے جب بھی تجھ سے سوال کیا تجھے بخیل اور جب بھی تیری بارگاہ کا قصد کیا تجھے رنجیدہ نہیں پایا۔ بلکہ تجھے اپنی دعا کی نسبت اوراپنے مقاصد کا بر لانے والا پایا۔ اور میں نے اپنے احوال میں سے ہر حال میں اور اپنے زمانہ ( حیات) کے ہر لمحہ میں تیری نعمتوں کو اپنے لیے فراواں پایا۔ لہذا تو میرے نزدیک قابل تعریف اور تیرا احسان لائق شکریہ ہے میرا جسم (عملا) میری زبان (قولا) اورمیری عقل (اعتقاد ) تیری حمد وسپاس کرتی ہے ایسی حمد جو حد کمال اور انتہائے شکر پر فائز ہو ۔ ایسی حمد جو میرے لیے تیری خوشنودی کے برابر ہو لہذا مجھے اپنی ناراضگی سے بچا۔ اے میرے پناہ گاہ جبکہ (متفرق) راستے مجھے خستہ وپریشان کردیں ۔اے میری لغزشوں کے معاف کرنے والے اگر تو میری پردہ پوشی نہ کرتا تو میں یقینا رسوا ہونے والوں میں سے ہوتا۔ اے اپنی مدد سے مجھے تقویت دینے والے اگر تیری مدد شریک حال نہ ہوتی تو میں مغلوب وشکست خوردہ لوگوں میں سے ہوتا ۔ اے وہ جس کی بارگاہ میں شاہوں نے ذلت وخواری کا جوا اپنی گردن میں ڈال لیا ہے اور وہ اس کے غلبہ واقتدار سے خوف زدہ ہیں۔ اے وہ جو تقوی کا سزاوار ہے ،اے وہ کہ حسن خوبی والے نام بس اسی کے لیے ہیں میں تجھ سے خواستگار ہوں کہ مجھ سے درگزر فرما اور مجھے بخش دے کیونکہ میں بے گناہ نہیں ہوں کہ عذر خواہی کروں اورنہ طاقت ور ہوں کہ غلبہ پا سکوں اور نہ گریز کی کوئی جگہ ہے کہ بھاگ سکوں۔ میں تجھ سے اپنی لغزشوں کی معافی چاہتا ہوں اوران گناہوں سے جنہوں نے مجھے ہلاک کر دیا ہے اور مجھے اس طرح گھیر لیا ہے کہ مجھے تباہ کر دیا ہے توبہ ومعذرت کرتا ہوں۔ میں اے میرے پروردگار ! ان گناہوں سے توبہ کرتے ہوئے تیری طرف بھاگ کھڑا ہوں تو اب میری توبہ قبول فرما ۔ تجھ سے پناہ چا ہتا ہوں مجھے پناہ دے ۔ تجھ سے امان مانگتا ہوں مجھے خوار نہ کر۔ تجھ سے سوال کرتا ہوں مجھے محروم نہ کر ۔ تیرے دامن سے وابستہ ہوں مجھے میرے حال پر چھوڑ نہ دے ۔ اور تجھ سے دعا مانگتا ہوں لہذا مجھے ناکام نہ پھیر ۔ اے میرے پروردگار! میں نے ایسے حال میں کہ میں بالکل مسکین ، عاجز ، خوف زدہ ، ترساں ،ہراساں ، بے سروسامان ، اور لاچار ہوں ۔ تجھے پکارا ہے۔ اے میرے معبود! میں اس اجر و ثواب کی جانب جس کا تو نے اپنے دوستوں سے وعدہ کیا ہے جلدی کرنے اوراس عذاب سے جس سے تو نے اپنے دشمنوں کو ڈرایا ہے ،دوری اختیار کرنے سے اپنی کمزوری اور ناتوانی کا گلہ کرتا ہوں ۔ نیز افکار کی زیادتی اورنفس کی پریشان خیالی کا شکوہ کرتا ہوں۔ اے میرے معبود ! تو میری باطنی حالت کی وجہ سے مجھے رسوا نہ کرنا اور میرے گناہوں کے باعث مجھے تباہ وبرباد نہ ہونے دینا میں تجھے پکارتا ہوں تو تو مجھے جواب دیتا ہے اور جب تو مجھے بلاتا ہے تو میں سستی کرتا ہوں اورمیں جو حاجت رکھتا ہوں تجھ سے طلب کرتا ہوں اور جہاں کہیں ہوتا ہوں اپنے راز دلی تیرے سامنے آشکارا کرتا ہوں اور تیرے سوا کسی کو نہیں پکارتا اور نہ تیرے علاوہ کسی سے آس رکھتا ہوں ۔حاضر ہوں !میں حاضر ہوں !! جو تجھ سے شکوہ کرے تو اس کا شکوہ سنتا ہے اور جو تجھ پر بھروسا کرے اس کی طرف متوجہ ہوتا ہے اور جو تیرا دامن تھام لے اسے( غم وفکر سے ) رہائی دیتا ہے۔اور جوتجھ سے پناہ چاہے اس سے غم واندوہ کو دور کر دیتا ہے ۔ اے میرے معبود ! میرے ناشکرے پن کی وجہ سے مجھے دنیا وآخرت کی بھلائی سے محروم نہ کر اور میرے وہ گناہ جو تیرے علم میں ہیں بخش دے ۔ اوراگر تو سزا دے اور اس لئے کہ میں ہی حد سے تجاوز کرنے والا، سست قدم ۔ زیاں کار، عاصی ، تقصیرپیشہ ، غفلت شعار اور اپنے حظ ونصیب میں لاپروائی کرنے والا ہوں ۔ اور اگر تو بخش دے تو اس لیے کہ تو سب رحم کرنے والوں سے زیادہ رحم کرنے والا ہے۔

الهي احمدك = و أنت للحمد اهل = علي حسن صنيعك الي ، و سبوغ نعمائك علي ، و جزيل عطائك عندي ، و علي ما فضلتني به من رحمتك ، و أسبغت علي من نعمتك ، فقد اصطنعت عندي ما يعجز عنه شكري .و لو لا احسانك الي و سبوغ نعمائك علي ما بلغت احراز حظي ، و لا اصلاح نفسي ، و لكنك ابتدأتني بالاحسان و رزقتني في اموري كلها الكفاية ، و صرفت عني جهد البلاء ، و منعت مني محذور القضاء .الهي فكم من بلاء جاهد قد صرفت عني ، و كم من نعمة سابغة اقررت بها عيني ، و كم من صنيعة كريمة لك عندي !!أنت الذي أجبت عند الاضطرار دعوتي و اقلت عند العثار زلتي ، و اخذت لي من الاعداء بظلامتي .الهي ما وجدتك بخيلا حين سألتك ، و لا منقبضا حين اردتك ، بل وجدتك لدعائي سامعا و لمطالبي معطيا ، و وجدت نعماك علي سابغة في كل شأن من شأني و كل زمان من زماني ، فأنت عندي محمود ، و صنيعك لدي مبرور .تحمدك نفسي و لساني و عقلي ، حمدا يبلغ الوفاء و حقيقة الشكر ، حمدا يكون مبلغ رضاك عني ، فنجني من سخطك .يا كهفي حين تعييني المذاهب ، و يا مقيلي عثرتي ، فلو لا سترك ، عورتي لكنت من المفضوحين ، و يا مؤيدي بالنصر ، فلو لا نصرك إياي لكنت من المغلوبين ، و يا من وضعت له الملوك نير المذلة علي اعناقها ، فهم من سطواته خائفون ، و يا اهل التقوي ، و يا من له الاسماء الحسني ، أسألك أن تعفو عني ، و تغفر لي ، فلست بريأ فاعتذر ، و لا بذي قوة فانتصر ، و لا مفر لي فافر .و استقيلك عثراتي ، و اتنصل اليك من ذنوبي التي قد اوبقتني ، و احاطت بي فاهلكتني ، منها فررت اليك - رب - تائبا فتب علي ، متعوذا فاعذني ، مستجيرا فلا تخذلني ، سائلا فلا تحرمني ، معتصما فلا تسلمني ، داعيا فلا تردني خائبا .دعوتك - يا رب - مسكينا ، مستكينا ، مشفقا ، خائفا ، و جلا ، فقيرا ، مضطرا اليك .اشكو اليك - يا الهي - ضعف نفسي عن المسارعة فيما وعدته اولياءك ، و المجانبة عما حذرته اعداءك ، و كثرة همومي ، و وسوسة نفسي .الهي لم تفضحني بسريرتي ، و لم تهلكني بجريرتي ، ادعوك فتجيبني و إن كنت بطيئا حين تدعوني ، و أسألك كلما شئت من حوائجي ، و حيث ما كنت وضعت عندك سري ، فلا ادعو سواك ، و لا ارجو غيرك .لبيك لبيك ، تسمع من شكا اليك و تلقي من توكل عليك ، و تخلص من اعتصم بك ، و تفرج عمن لاذ بك .الهي فلا تحرمني خير الاخرة و الاولي لقلة شكري و اغفر لي ما تعلم من ذنوبي .إن تعذب فأنا الظالم المفرط المضيع الاثم المقصر المضجع المغفل حظ نفسي ، و إن تغفر فأنت أرحم الراحمين .
Last modified on Wednesday, 13 August 2014 15:52
Login to post comments