×

Warning

JUser: :_load: Unable to load user with ID: 830

31۔ دعاۓ توبہ

October 24, 2013 494

اے معبود ! اے وہ جس کی توصیف سے وصف کرنے والوں کے توصیفی الفاظ قاصر ہیں ۔ اے وہ جو امیدواروں کی امیدوں کا مرکز ہے ۔ اے وہ

جس کے ہاں نیکوکاروں کا اجر ضائع نہیں ہوتا ۔ اے وہ جو عبادت گزاروں کے خوف کی منزل منتہا ہے ۔ اے وہ جو پرہیزگاروں کے بیم و ہراس کی حدّ آخر ہے یہ اس شخص کا موقف ہے جو گناہوں کے ہاتھوں میں کھیلتا ہے اور خطا‎ؤں کی باگوں نے جسے کھینچ لیا ہے اور جس پر شیطان غالب آ گیا ہے ۔ اس لۓ تیرے حکم سے لاپرواہی کرتے ہوۓ اس نے ( اداۓ فرض ) میں کوتاہی کی اور فریب خوردگی کی وجہ سے تیرے منہیات کا مرتکب ہوتا ہے ۔گویا وہ اپنے کو تیرے قبضہ قدرت میں سمجھتا ہی نہیں ہے اور تیرے فضل و احسان کو جو تو نے اس پر کۓ ہیں مانتا ہی نہیں ہے ۔ مگر جب اس کی چشم بصیرت وا ہوئی اور اس کوری و بے بصری کے بادل اس کے سامنے سے چھٹے تو اس نے اپنے نفس پر کۓ ہوۓ ظلموں کا جائزہ لیا اور جن جن موارد پر اپنے پروردگار کی مخالفتیں کی تھیں ان پر نظر دوڑائی تو اپنے بڑے گناہوں کو ( واقعا ) بڑا اور اپنی عظیم مخالفتوں کو (حقیقتا ) عظیم پایا تو وہ اس حالت میں کہ تجھ سےامیدوار بھی ہے اور شرمسار بھی ، تیری جانب متوجہ ہوا اور تجھ پر اعتماد کرتے ہوۓ تیری طرف راغب ہوا اور یقین و اطمینان کے ساتھ اپنی خواہش و آرزو کو لے کر تیرا قصد کیا اور ( دل میں ) تیرا خوف لۓ ہوۓ خلوص کے ساتھ تیری بارگاہ کا ارادہ کیا اس حالت میں کہ تیرے علاوہ اسے کسی سے غرض نہ تھی اور تیرے سواء اسے کسی کا خوف نہ تھا ۔ چنانچہ وہ عاجزانہ صورت میں تیرے سامنے آ کھڑا ہوا اور فروتنی سے اپنی آنکھیں زمین میں گاڑ لیں اور تذلّل و انکسار سے تیری عظمت کے آگے سر جھکا لیا اور عجزونیاز مندی سے اپنے رازہاۓ درون پردہ جنہیں تو اس سے بہتر جانتا ہے تیرے آگے کھول دیۓ اور عاجزی سے اپنے وہ گناہ جن کا تو اس سے زیادہ حساب رکھتا ہے ایک ایک کرکے شمار کۓ اور ان بڑے گناہوں سے جو تیرے علم میں اس کے لۓ مہلک اور ان بد اعمالیوں سے جو تیرے فیصلہ کے مطابق اس کے لۓ رسوا کن ہیں ، دادو فریاد کرتا ہے ۔وہ گناہ کہ جن کی لذت جاتی رہی ہے اور ان کا وبال ہمیشہ کے لۓ باقی رہ گیا ہے ۔ اے میرے معبود ! اگر تو اس پرعذاب کرے تو وہ تیرے عدل کا منکر نہیں ہوگا ۔ اور اگر اس سے درگزر کرے اور ترس کھاۓ تو وہ تیرے عفو کو کوئي عیب اور بڑی بات نہیں سمجھے گا ۔اس لۓ کہ تو وہ پروردگار کریم ہے ۔ جس کے نزدیک بڑے سے بڑے گناہ کو بھی بخش دینا کوئی بڑی بات نہیں ہے ۔ اچھا تو اے میرے معبود ! میں تیری بارگاہ میں حاضر ہوں ۔ تیرے حکم دعا کی اطاعت کرتے ہوۓ اور تیرے وعدہ کا ایفا چاہتے ہوۓ جو قبولیت دعا کے متعلق تو نے اپنے اس ارشاد میں کیا ہے ۔ '' مجھ سے دعا مانگو تو میں تمہاری دعا قبول کروں گا '' ۔ خداوندا ! محمد اور ان کی آل پر رحمت نازل فرما اور اپنی مغفرت میرے شامل حال کر جس طرح میں ( اپنے گناہوں کا ) اقرار کرتے ہوۓ تیری طرف متوجہ ہوا ہوں اور ان مقامات سے جہاں گناہوں سے مغلوب ہونا پڑتا ہے مجھے ( سہارا دے کر ) اوپر اٹھا لے جس طرح میں نے اپنے نفس کو تیرے آگے ( خاک مذلّت پر ) ڈال دیا ہے ۔ اور اپنے دامن رحمت سے میری پردہ پوشی فرما جس طرح مجھ سے انتقام لینے میں صبر و حلم سے کام لیا ہے ۔ اے اللہ ! اپنی اطاعت میں میری نیت کو استوار اور اپنی عبادت میں میری بصیرت کو قوی کر اور مجھے ان اعمال کے بجا لانے کی توفیق دے جن کے ذریعے تو میرے گناہوں کے میل کو دھو ڈالے ۔ اور جب مجھے دنیا سے اٹھاۓ تو اپنے دین اور اپنے نبی محمد (ص) کے آئین پر اٹھا ۔ اے میرے معبود ! میں اس مقام پر اپنے چھوٹے بڑے گناہوں پوشیدہ و آشکارا معصیتوں اور گزشتہ و موجودہ لغزشوں سے توبہ کرتا ہوں ، اس شخص کی سی توبہ جو دل میں معصیت کا خیال بھی نہ لاۓ اور گناہ کی طرف پلٹنے کا تصوّر بھی نہ کرے ۔خداوندا! تو نے اپنی محکم کتاب میں فرمایا ہے کہ تو بندوں کی توبہ قبول کرتا ہے اور گناہوں کو معاف کرتا ہے اور توبہ کرنے والوں کو دوست رکھتا ہے ۔ لہذا تو میری توبہ قبول فرما جیسا کہ تو نے وعدہ کیا ہے اور میرے گناہوں کو معاف کر دے جیسا کہ تو نے ذمہ لیا ہے ، اور حسب قرارداد اپنی محبت کو میرے لۓ ضروری قرار دے ۔ اور میں تجھ سے اے میرے پروردگار ! یہ اقرار کرتا ہوں کہ تیری ناپسندیدہ باتوں کی طرف رخ نہیں کروں گا اور یہ قول و قرار کرتا ہوں کہ قابل مذمت چیزوں کی طرف رجوع نہ کروں گا ۔ اور یہ عہد کرتا ہوں کہ تیری تمام نافرمانیوں کو یکسر چھوڑ دوں گا ۔ بارالہا ! تو میرے عمل و کردار سے خوب آگاہ ہے ۔ اب جو بھی تو جانتا ہے اسے بخش دے اور اپنی قدرت کاملہ سے پسندیدہ چیزوں کی طرف مجھے موڑ دے ۔ اے اللہ ! میرے ذمّہ کتنے ایسے حقوق ہیں جو مجھے یاد ہیں ۔ اور کتنے ایسے مظلمے ہیں جن پر نسیان کا پردہ پڑا ہوا ہے ۔ لیکن وہ سب کے سب تیری آنکھوں کے سامنے ہیں ۔ ایسی آنکھیں جو خواب آلودہ نہیں ہوتیں ، اور تیرے علم میں ہیں ایسا علم جس میں فروگذاشت نہیں ہوتی ۔ لہذا جن لوگوں کا مجھ پر کوئی حق ہے اس کا انہیں عوض دے کر اس کا بوجھ مجھ سے برطرف اور اس کا بار ہلکا کر دے ، اور مجھے پھر ویسے گناہوں کے ارتکاب سے محفوظ رکھ ۔ اے اللہ ! میں توبہ پر قائم نہیں رہ سکتا ،مگر تیری ہی نگرانی سے ، اور گناہوں سے باز نہیں آ سکتا مگر تیری ہی قوت و توانائی سے ۔ لہذا مجھے بے نیاز کرنے والی قوت سے تقویت دے ۔ اور ( گناہوں سے ) روکنے والی نگرانی کا ذمہ لے ۔ اے اللہ ! وہ بندہ جو تجھ سے توبہ کرے اور تیرے علم غیب میں وہ توبہ شکنی کرنےوالوں اور گناہ ومعصیت کی طرف دوبارہ پلٹنے والا ہو تو میں تجھ سے پناہ مانگتا ہوں کہ اس جیسا ہوں ۔ میری توبہ کو ایسی توبہ قرار دے کہ اس کے بعد پھر توبہ کی احتیاج نہ رہے جس سے گزشتہ گناہ محو ہو جائیں اور زندگی کے باقی دنوں میں (گناہوں سے ) سلامتی کا سامان ہو۔ اے اللہ ! میں اپنی جہالتوں سے عذر خواہ اور اپنی بد اعمالیوں سے بخشش کا طلب گار ہوں ۔ لہذا اپنے لطف و احسان سے مجھے پناہ گاہ رحمت میں جگہ دے اوراپنے تفضل سے اپنی عافیت کے پردہ میں چھپا لے ۔ اے اللہ ! میں دل میں گزرنے والے خیالات اور آنکھ کے اشاروں اور زبان کی گفتگوؤں ،غرض ہر اس چیز سے جو تیرے ارادہ و رضا کے خلاف ہو اور تیری محبت کے حدود سے باہر ہو ، تیری بارگاہ میں توبہ کرتا ہوں ۔ ایسی توبہ جس سے میرا ہر ہر عضو اپنی جگہ پر تیری عقوبتوں سے بچا رہے اور ان تکلیف دہ عذابوں سے جن سے سرکش لوگ خائف رہتے ہیں محفوظ رہے ۔ اے معبود ! یہ تیرے سامنے میرا عالم تنہائی ، تیرے خوف سے میرے دل کی دھڑکن ، تیری ہیبت سے میرے اعضاء کی تھرتھری ۔ ان حالتوں پر رحم فرما ۔ پروردگارا! مجھے گناہوں نے تیری بارگاہ میں رسوائی کی منزل پر لا کھڑا کیا ہے ۔ اب اگر چپ رہوں تو میری طرف سے کوئی بولنے والا نہیں ہے اور کوئی وسیلہ لاؤں تو شفاعت کا سزاوار نہیں ہوں ۔ اے اللہ ! محمد اور ان کی آل پر رحمت نازل فرما اور اپنے کرم و بخشش کو میری خطاؤں کا شفیع قرار دے اور اپنے فضل سے میرے گناہوں کو بخش دے اور جس سزا کا میں سزاوار ہوں وہ ‎سزا نہ دے اور اپنا دامن کرم مجھ پر پھیلا دے اور اپنے پردہ عفوورحمت میں مجھے ڈھانپ لے اور مجھ سے اس ذی اقتدار شخص کا سا برتاؤ کر جس کے آگے کوئی ذلیل گڑگڑاۓ تو وہ اس پر ترس کھاۓ یا اس دولت مند کا سا جس سےکوئی بندہ محتاج لپٹے تو وہ اسے سہارا دے کر اٹھا لے ۔بارالہا ! مجھے تیرے ( عذاب ) سے کوئی پناہ دینے والا نہیں ہے ۔ اب تیری قوت و توانائی ہی پناہ دے تو دے ۔ اور تیرے یہاں کوئی میری سفارش کرنے والانہیں ۔ اب تیرا فضل ہی سفارش کرے تو کرے ۔ اور میرے گناہوں نے مجھے ہراساں کر دیا ہے ۔ اب تیرا عفو و درگذر ہی مجھے مطمئن کرے تو کرے ۔ یہ جو کچھ میں کہہ رہا ہوں اس لۓ نہیں کہ میں اپنی بداعمالیوں سے ناواقف اور اپنی گزشتہ بدکاریوں کو فراموش کر چکا ہوں بلکہ اس لۓ کہ تیرا آسمان اور جو اس میں رہتے سہتے ہیں اور تیری زمین اور جو اس پر آباد ہیں ۔ میری ندامت کو جس کا میں نے تیرے سامنے اظہار کیا ہے ، اور میری توبہ کو جس کے ذریعہ تجھ سے پناہ مانگی ہے سن لیں ۔ تاکہ تیری رحمت کی کارفرمائی کی وجہ سے کسی کو میرے حال زار پر رحم آ جاۓ یا میری پریشاں حالی پر اس کا دل پسیجے تو میرے حق میں دعا کرے جس کی تیرے ہاں میری دعا سے زیادہ شنوائی ہو ۔ یا کوئی ایسی سفارش حاصل کو لوں جو تیرے ہاں میری درخواست سے زیادہ مؤثر ہو اور اس طرح تیرے غضب سے نجات کی دستاویز اور تیری خوشنودی کا پروانہ حاصل کر سکوں ۔ اے اللہ ! اگر تیری بارگاہ میں ندامت و پشیمانی ہی توبہ ہے تو میں پشیمان ہونے والوں میں سب سے زیادہ ہوں ۔ اور اگر ترک معصیت ہی توبہ و انابت ہے تو میں توبہ کرنے والوں میں اوّل درجہ پر ہوں ۔ اور اگر طلب مغفرت گناہوں کو زائل کرنے کا سبب ہے تو مغفرت کرنے والوں میں سے ایک میں بھی ہوں ۔ خدایا جب کہ تو نے توبہ کا حکم دیا ہے اور قبول کرنے کا ذمہ لیا ہے اور دعا پر آمادہ کیا ہے اور قبولیت کا وعدہ فرمایا ہے تو رحمت نازل فرما محمد اور ان کی آل پر اور میری توبہ کو قبول فرما اور مجھے اپنی رحمت سے ناامیدی کے ساتھ نہ پلٹا کیونکہ تو گنہگاروں کی توبہ قبول کرنے والا اور رجوع ہونے والے خطاکاروں پر رحم کرنے والا ہے ۔ اے اللہ ! محمد اور ان کی آل پر رحمت نازل فرما جس طرح تو نے ان کے وسیلہ سے ہماری ہدایت فرمائی ہے ۔ تو محمد اور ان کی آل پر رحمت نازل کر ۔ جس طرح ان کے ذریعہ ہمیں ( گمراہی کے بھنور سے) نکالا ہے ۔ تو محمد اور ان کی آل پر رحمت نازل کر ، ایسی رحمت جو قیامت کے روز اور تجھ سے احتیاج کے دن ہماری سفارش کرے اس لۓ کہ تو ہرچیز پر قدرت رکھتا ہے اور یہ امر تیرے لۓ سہل و آسان ہے ۔

اللهم يا من لا يصفه نعت الواصفين .و يا من لا يجاوزه رجاء الراجين .و يا من لا يضيع لديه اجر المحسنين .و يا من هو منتهي خوف العابدين .و يا من هو غاية خشية المتقين .هذا مقام من تداولته ايدي الذنوب ، و قادته ازمة الخطايا ، و استحوذ عليه الشيطان ، فقصر عما امرت به تفريطا ، و تعاطي ما نهيت عنه تغريرا .كالجاهل بقدرتك عليه ، أو كالمنكر فضل احسانك اليه حتي إذا انفتح له بصر الهدي ، و تقشعت عنه سحائب العمي ، احصي ما ظلم به نفسه ، و فكر فيما خالف به ربه ، فراي كبير عصيانه كبيرا و جليل مخالفته جليلا .فاقبل نحوك مؤملا لك مستحييا منك ، و وجه رغبته اليك ثقة بك ، فامك بطمعه يقينا ، و قصدك بخوفه اخلاصا ، قد خلا طمعه من كل مطموع فيه غيرك ، و افرخ روعه من كل محذور منه سواك .فمثل بين يديك متضرعا ، و غمض بصره الي الارض متخشعا ، و طأطأ رأسه لعزتك متذللا ، و ابثك من سره ما أنت اعلم به منه خضوعا ، و عدد به من ذنوبه ما أنت احصي لها خشوعا ، و استغاث بك من عظيم ما وقع به في علمك و قبيح ما فضحه في حكمك : من ذنوب ادبرت لذاتها فذهبت ، و اقامت تبعاتها فلزمت .لا ينكر - يا الهي - عدلك إن عاقبته و لا يستعظم عفوك إن عفوت عنه و رحمته ، لأنك الرب الكريم الذي لا يتعاظمه غفران الذنب العظيم .اللهم فها انا ذا قد جئتك مطيعا لامرك فيما امرت به من الدعاء ، متنجزا وعدك فيما وعدت به من الاجابة ، إذ تقول : ادعوني استجب لكم .اللهم فصل علي محمد و آله ، و القني بمغفرتك كما لقيتك باقراري ، و ارفعني عن مصارع الذنوب كما وضعت لك نفسي ، و استرني بسترك كما تانيتني عن الانتقام مني .اللهم و ثبت في طاعتك نيتي ، و احكم في عبادتك بصيرتي ، و وفقني من الاغمال لما تغسل به دنس الخطايا عني ، و توفني علي ملتك و ملة نبيك : محمد - عليه السلام - إذا توفيتني .اللهم إني اتوب اليك في مقامي هذا من كبائر ذنوبي و صغائرها ، و بواطن سيئاتي و ظواهرها ، و سوالف زلاتي و حوادثها ، توبة من لا يحدث نفسه بمعصية ، و لا يضمر أن يعود في خطيئة .و قد قلت - يا الهي - في محكم كتابك : إنك تقبل التوبة عن عبادك ، و تعفو عن السيئات ، و تحب التوابين ، فاقبل توبتي كما وعدت ، و اعف عن سيئاتي كما ضمنت ، و اوجب محبتك كما شرطت .و لك - يا رب - شرطي ألا اعود في مكروهك ، و ضماني أن لا ارجع في مذمومك ، و عهدي أن اهجر جميع معاصيك .اللهم إنك أعلم بما علمت فاغفرلي ماعلمت ، و اصرفني بقدرتك الي ما احببت .اللهم و علي تبعات قد حفظتهن ، و تبعات قد نسيتهن ، و كلهن بعينك التي لا تنام ، و علمك الذي لا ينسي ، فعوض منها اهلها ، و احطط عني وزرها ، و خفف عني ثقلها ، و اعصمني من أن اقارف مثلها .اللهم و إنه لا وفاء لي بالتوبة الا بعصمتك ، و لا استمساك بي عن الخطايا إلا عن قوتك ، فقوني بقوة كافية ، و تولني بعصمة مانعة .اللهم ايما عبد تاب اليك و هو في علم الغيب عندك فاسخ لتوبته ، و عائد في ذنبه و خطيئته ، فإني أعوذ بك أن اكون كذلك ، فاجعل توبتي هذه توبة لا احتاج بعدها الي توبة ، توبة موجبة لمحو ما سلف ، و السلامة فيما بقي .اللهم إني اعتذر اليك من جهلي ، و استوهبك سوء فعلي ، فاضممني الي كنف رحمتك تطولا ، و استرني بستر عافيتك تفضلا .اللهم و إني اتوب اليك من كل ما خالف ارادتك ، أو زال عن محبتك من خطرات قلبي ، و لحظات عيني ، و حكايات لساني ، توبة تسلم بها كل جارحة علي حيالها من تبعاتك ، و تامن مما يخاف المعتدون من اليم سطواتك .اللهم فارحم وحدتي بين يديك ، و وجيب قلبي من خشيتك ، و اضطراب اركاني من هيبتك ، فقد اقامتني - يا رب - ذنوبي مقام الخزي بفنائك ، فإن سكت لم ينطق عني احد ، و إن شفعت فلست باهل الشفاعة .اللهم صل علي محمد و آله ، و شفع في خطاياي كرمك ، وعد علي سيئاتي بعفوك ، و لا تجزني جزائي من عقوبتك ، و ابسط علي طولك ، و جللني بسترك ، و افعل بي فعل عزيز تضرع اليه عبد ذليل فرحمه ، أو غني تعرض له عبد فقير فنعشه .اللهم لا خفير لي منك فليخفرني عزك ، و لا شفيع لي اليك فليشفع لي فضلك ، و قد اوجلتني خطاياي فليؤمني عفوك .فما كل ما نطقت به عن جهل مني بسوء اثري ، و لا نسيان لما سبق من ذميم فعلي ، لكن لتسمع سماؤك و من فيها و ارضك و من عليها ما اظهرت لك من الندم ، و لجات اليك فيه من التوبة .فلعل بعضهم برحمتك يرحمني لسوء موقفي ، أو تدركه الرقة علي لسوء حالي فينالني منه بدعوة هي اسمع لديك من دعائي ، أو شفاعة أوكد عندك من شفاعتي تكون بها نجاتي من غضبك و فوزتي برضاك .اللهم إن يكن الندم توبة اليك فانا اندم النادمين ، و إن يكن الترك لمعصيتك انابة فانا اول المنيبين ، و إن يكن الاستغفار حطة للذنوب فإني لك من المستغفرين .اللهم فكما امرت بالتوبة ، و ضمنت القبول ، و حثثت علي الدعاء ، و وعدت الاجابة ، فصل علي محمد و آله ، و اقبل توبتي ، و لا ترجعني مرجع الخيبة من رحمتك ، إنك أنت التواب علي المذنبين ، الرحيم للخاطئين المنيبين .اللهم صل علي محمد و آله ، كما هديتنا به ، و صل علي محمد و آله ، كما استنقذتنا به ، و صل علي محمد و آله ، صلوة تشفع لنا يوم القيمة و يوم الفاقة اليك ، إنك علي كل شي ء قدير ، و هو عليك يسير .
Last modified on Wednesday, 13 August 2014 13:35
Login to post comments