×

Warning

JUser: :_load: Unable to load user with ID: 830

اتر پردیش میں ماحول بگڑنے کا خدشہ

June 20, 2014 726

اتر پردیش کے وزیر اعلی اکھلیش یادو کے سامنے اور بڑا چیلنج آنے والا ہے جس سے مقابلہ کرنا آسان نہیں ہے. انتخابات کے نتائج کے بعد

ایک طرف جہاں پارٹی، خاندان کا دباؤ ان کے اقتدار کے طریقوں کو لے کر بڑھا، وہیں میڈیا کے کردار بھی بدل گئے. اس سب کی وجہ سے وہ الگ تھلگ نظر آ رہے ہیں. بدایوں حادثہ کو لے کر اکھلیش یادو کی جس طرح کی سیاسی گھیرا بندی کی گئی ہے وہ آنے والے دنوں کا اشارہ بھی ہے. اگلے ماہ سے مذہبی پروگراموں کا جو دور شروع ہوگا وہ درگا پوجا اور عید تک چلے گا. بی جے پی اس وقت جوش سے لبریز ہے اور وہ اکھلیش حکومت کو بوجھ مان کر جلد سے جلد نمٹانے کی جلد بازی میں ہے. اوما بھارتی سے لے کر کئی رہنماؤں کے اس طرح کے بیان آ بھی چکے ہیں. مغرب میں بی جے پی کے سنگیت سوم نے جس تیور میں پولیس کو دھمکایا ہے وہ بی جے پی لیڈروں کی ذہنیت کو صاف کر دیتا ہے. بی جے پی اترپردیش حکومت سے ہر ایشو پر ٹکرائیگی اور میڈیا کے ذریعہ اس حکومت کو مسترد بتانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑے گی. اس کی شروعات ہو چکی ہے. اب اضلاع - اضلاع میں کئی مسائل کو لے کر بی جے پی سڑک پر اتر رہی ہے. اس کے ساتھ ہی لکھنؤ میں ایسی تحریکوں سے ٹکراؤ شروع ہو چکا ہے. دراصل اسمبلی کی کئی نشستوں پر ہونے والے ضمنی انتخابات کے لئے بی جے پی تیاری کر رہی ہے. اس لئے ریاست میں سیاسی ماحول ابھی اور گرم ہو گا.

خاص بات یہ ہے کہ ایسے ماحول میں میڈیا بھی محاذ کھول رہا ہے. دراصل مرکز میں مودی حکومت کے اقتدار میں آنے کے بعد میڈیا کا ایک بڑا طبقہ بھی اکھلیش حکومت کے خلاف کھڑا ہو چکا ہے. اکھلیش یادو پر حکومت نہ چلا پانے کا الزام چسپاں ہو چکا ہے. حالانکہ پہلے یہ الزام تھا کہ اتر پردیش میں کئی وزیر اعلی ہیں، ملائم سنگھ، شیو پال یادو، رام گوپال یادو سے لے کر اعظم خان تک پر لوک سبھا انتخابات میں ناکامی کا ٹھیکرا اکیلے اکھلیش پر پھوٹا. جبکہ یہ انتخابات میں مایاوتی، اجیت سنگھ سے لے کر لالو نتیش تمام بری طرح ہارے اور اس کی وجہ کوئی بہترین حکومت نہیں رہی اور نہ ہی ترقی. ورنہ راجستھان میں آدمی تو آدمی جانوروں کا مفت علاج کرانے کے ساتھ کئی اہم اسکیم نافذ کرنے والے اشوک گہلوت کو اتنی بری طرح نہ ہارتے. اس لئے انتخاب کا مسئلہ الگ ہے جو اب نمٹ بھی چکا ہے اس لئے اکھلیش کو اقتدار کے معاملہ پر گھیرا جائے گا.

بدایوں کا مدعہ مثال ہے جسے سیاسی رنگ دینے میں ہر پارٹی آگے رہی. تمام کو پتہ ہے کہ عصمت دری کے واقعات کے معاملہ میں کئی ریاست اتر پردیش سے بھی آگے ہے پر مسئلہ اترپردیش بنا تو اس کی دو وجہ ہے. ایک تو وزیر اعلی اکھلیش یادو نے وقت پر سخت قدم نہیں اٹھایا دوسرے جب خاموش رہنے کی ضرورت تھی تو میڈیا پر طنز کسا. ٹھیک اسی طرح جیسے وہ سیفی فیسٹیول کے معاملہ پر بے وجہ میڈیا سے ٹکرائے اور میڈیا نے مظفرنگر واقعہ کو سیفی فیسٹیول سے جوڑ کر ان کی ساکھ پر سوال کھڑا کر دیا. اس بار بھی تمام کی ناراضگی اکھلیش یادو کی ایک صحافی پر کئے گئے  تبصرے ہی تھے. یہ بات نہ تو اکھلیش یادو کے ارد گرد رہنے والے کوئی لیڈر انہیں بتا پائے اور نہ ہی حکومت کی طرف سے میڈیا سنبھالنے والے نونیت سہگل جیسے نوکر شاہ. حکومت صرف نوکر شاہوں کے بھروسے نہیں چلتی ہے بلکہ اس کے لئے سیاسی نظر کی بھی ضرورت ہوتی ہے جس کا مسلسل فقدان اترپردیش میں دیکھا جا رہا ہے. مایاوتی جب اقتدار سے بے دخل ہوئی تھی تو بھی ان کا سیاسی انتظام نوکرشاہوں کے ہاتھ میں تھا اور میڈیا انتظام بھی. سماج وادی پارٹی کے لوک سبھا انتخابات کا میڈیا انتظام اس بار ایک نوکرشاہ دیکھ رہے تھے کوئی سیاسی شخصیت نہیں. نتیجہ سامنے آ چکا ہے. وزیر اعلی اکھلیش یادو سے اسمبلی چناؤ مہم کے دوران ہم نے جب سوال کیا تھا کہ کیا وہ مایاوتی کی طرح میڈیا سے دوری بنا کر رکھیں گے تو ان کا جواب تھا - قطعی نہیں. پر بدقسمتی سے کچھ تقریبات کے علاوہ میڈیا سے بھی ان کی دوری بنی رہی ہے جس سے وہ عوام کی دل کی حالت کو سمجھنے میں ناکام بھی ہوئے ہیں.

اسی طرح یہ خیال عام ہے کہ ریاست میں یادو برادری کے افسروں پر کوئی کارروائی نہیں ہو سکتی اور جتنے بھی اہم تھانہ ہیں تمام کے تھانیدار یادو ہیں. اسے لے کر سیاسی مبصر ویریندرناتھ بھٹ نے کہا - وہ میڈیا تو دور اپنی پارٹی کے رہنماؤں سے بھی دوری بڑھا رہے ہیں یہ عادت خطرناک ثابت ہوگی. ایسے وقت میں تو انہیں زیادہ سے زیادہ وقت عوام کو  دینا چاہئے. ایک جھٹکے میں بیوروکریسی میں بڑے پیمانے پر ردوبدل سے کچھ حاصل ہونا مشکل ہے. حکومت کو تو اب ساون کے سفر سے شروع ہونے والے مذہبی تقریبات کو لے کر تیار ہونا چاہئے جس سے ماحول بگڑ بھی سکتا ہے.


اس کے تبصرے سے بھی آنے والے دنوں کا اشارہ مل رہا ہے. خاص بات یہ ہے کہ یہ چیلنج صرف حکمراں پارٹی کا نہیں ہے بلکہ تمام سیکولر جماعتوں کے لئے ہے. تحریک نسوا ںکی کنوینر طاہرہ حسن نے کہا - اتر پردیش میں عدم استحکام پھیلانے کی کوششوں کو سب کو سمجھنا چاہئے اور اس کا مقابلہ کرنے کے لئے بھی تیار رہنا ہوگا.
امبریش کمار

Login to post comments