×

Warning

JUser: :_load: Unable to load user with ID: 830

۲؍ لاکھ کے سرمایہ کاروں کو انکم ٹیکس کا نوٹس

May 13, 2014 425

انکم ٹیکس ڈپارٹمنٹ آج کل چھوٹے چھوٹے سرمایہ کاروں کو بھی انکم ٹیکس نوٹس بھیج رہا ہے جنہوں نے ایک سال میں صرف۲؍ لاکھ روپے کا

  انویسٹ کیا ہے. ان انویسٹروں سے بھی تفصیل مانگی جا رہی ہیں جنہوں نے بیس ہزار روپیے سے زیادہ کا انویسٹ کیا ہے. اس طرح کی نوٹس سے سرمایہ کاروں کے طبقہ میں ہلچل مچی ہوئی ہے. ایک اندازہ کے مطابق گزشتہ چند ماہ میں ایسے۱۳؍ ہزار نوٹس بھیجے گئے ہیں. انکم ٹیکس ڈپارٹمینٹ کے كمپلائنس مینجمنٹ سیل نے یہ نوٹس بھیجی ہیں. اس طرح کی معلومات ان سرمایہ کاروں سے بھی منگائی گئی ہیں جنہوں نے مالی۱۰۔۲۰۰۹ء کے بعد سے اب تک کوئی بھی ٹیکس ریٹرن فائل نہیں کیا ہے. انکم ٹیکس ذرائع کے مطابق اس ورزش کا مقصد اسٹاک مارکیٹ یا انویسٹ کے دائرے میں بلیک منی کے استعمال کو روکنا ہے. ایک انویسٹ مینٹ مشیر کے مطابق موجودہ دور میں مندرجہ بالا کرنسی کی مقررہ حد بہت کم ہے اور اسے ۱۰؍گنا بڑھانا چاہئے. اتنی کم رقم کے سرمایہ کاروں کو جب سے انکم ٹیکس کا نوٹس ملا ہے اس کے بعد سے ان میں ہلچل مچی ہوئی ہے اور وہ انکم ٹیکس ڈپارٹمینٹ کے دائرے میں آنے سے ڈر رہے ہیں. انویسٹروں کا کہنا ہے کہ ان کا انویسٹ مینٹ بہت کم ہے اور گزشتہ کچھ سالوں سے چل رہے بحران کی وجہ سے انہیں کوئی خاص فائدہ نہیں ہوا ہے پھر کون انکم ٹیکس کے چکر کاٹے۔
وہیں چارٹرڈ اكاونٹنٹ درگیش كابرا کے مطابق ایک طرف حکومت چھوٹے انویسٹروں کو انویسٹ کرنے کے لیے حوصلہ افزائی کی بات کرتی ہے اور دوسری طرف وہ انہیں انکم ٹیکس ڈپارٹمینٹ کے چکر میں پھنسا رہی ہے. اس سے انویسٹروں میں صحیح پیغام نہیں جا رہا اور سرمایہ کار اپنی بچت شیئر مارکیٹ میں سرمایہ کاری نہ کرکے بینکوں کی ایف ڈی، ریئل اسٹیٹ یا سونا چاندی میں انویسٹ کرنے کیلئے حوصلہ افزا ہوں گے. وہیں سرمایہ کار وشنو شراف کا کہنا ہے کہ محکمہ کو کم سے کم۱۰؍ لاکھ روپے کا انویسٹ کرنے والوں سے معلومات مانگنی چاہئے۔ انکم ٹیکس ذرائع کا کہنا ہے کہ وہ چاہتے ہیں کہ انویسٹ کا حساب رکھا جائے کیونکہ جو سرمایہ کار ۲۔۲؍لاکھ روپے کا انویسٹ کر رہا ہو تو اس کی آمدنی بھی انکم ٹیکس کے قابل ہو سکتی ہے۔

Last modified on Friday, 30 May 2014 10:31
Login to post comments