ایم آئی ایم کا رجسٹریشن منسوخ

ایم آئی ایم کا  رجسٹریشن منسوخ All images are copyrighted to their respective owners.

اویسی کی ایم آئی ایم سمیت ۱۹۱؍علاقائی پارٹیوں کا رجسٹریشن منسوخ

ممبئی:(ایجنسی )مہاراشٹر ریاستی الیکشن کمیشن نے آل انڈیا مجلس اتحادوالمسلمین (ایم آئی ایم ) سمیت۱۹۱؍ علاقائی پارٹیوں کارجسٹریشن منسوخ کر دیا ہے۔ اسد الدین اویسی کی پارٹی کو بڑا جھٹکا لگا ہے،لیکن پارٹی کے ایم ایل اے اور ترجمان امتیازجلیل نے کہا کہ پارٹی فیصلہ کے خلاف کمیشن کے سامنے اپیل کرے گی ۔

انہوں نے کہا کہ پارٹی الیکشن کمیشن کے فیصلہ کا احترام کرتی ہے اور انہیں مطلوب تمام دستاویزات پیش کیے جائیں گے ۔میونسپل کارپوریشن کے الیکشن کے لیے ہماری تیاری مکمل ہے اور بی ایم سی انتخابات میں بھرپورتیاری کے ساتھ اتریں گے۔

اطلاع کے مطابق کمیشن نے۱۹۱؍پارٹیوں کی منظوری کو منسوخ کر دیا ہے۔ان پارٹیوں پر الزام ہے کہ انہوںنے اپنے اکاؤنٹس کی تفصیلات اور رٹرن جمع نہیں کیے ہیں۔اس کا نتیجہ یہ ہوگا کہ اگلے سال ہونے والےممبئی میونسپل کارپوریشن کا الیکشن ایم آئی ایم نہیں لڑسکے گی۔ویسے انہوں نے اپیل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

مہاراشٹر میں اسد الدین اویسی کی پارٹی ایم آئی ایم کے دو رکن اسمبلی ہیں۔ ان کی پارٹی اب اگلے ممبئی میونسپل کارپوریشن انتخابات لڑنے کی تیاری کر رہی تھی، لیکن الیکشن کمیشن کے فیصلے کے بعد ایم آئی ایم کو سخت جھٹکا لگا ہے۔اپنے بیانات کے لئے مشہور لوک سبھا ممبر پارلیمنٹ اسد الدین اویسی کی پارٹی آل انڈیا مجلس اتحاد مسلمین کی مہاراشٹر الیکشن کمیشن نے ریاست میں منظوری منسوخ کردی ہے ۔ان کی پارٹی پر یہ کارروائی آمدنی اور فنڈ سے منسلک معلومات نہ دینے کی وجہ سے کی گئی ہے۔

مہاراشٹر الیکشن کمیشن کے اس فیصلے کا براہ راست اثر اگلے سال فروری میں ہونے والے بی ایم سی انتخابات پر پڑے گا۔ اس فیصلے کی وجہ اویسی کی پارٹی بی ایم سی انتخابات میں حصہ نہیں لے پائے گی۔

الیکشن کمیشن نے اس کے علاوہ سابق آئی اے ایس افسر اور کھوبراگڑے کی پارٹی ریپبلکن پارٹی آف انڈیا سمیت ۱۹۱؍ پارٹیوں کی بھی ریاست میں تسلیم مسترد کر دی ہے۔

ایم آئی ایم کی ریاست میں دو رکن اسمبلی ہیں۔ریاست الیکشن کمشنر نے کہا کہ ان پارٹیوں کو تمام ضروری دستاویزات فائل کرنے کو کہا گیا تھا۔انہوں نے بتایا کہ ان جماعتوں کو کئی بار نوٹس بھیجا جا چکا تھا اور بالآخر یہ قدم اٹھانا پڑا۔ اگر یہ پارٹیاں بلدیاتی انتخابات میں حصہ لینا چاہتی ہیں تو انہیں دوبارہ رجسٹریشن کرانا ہوگا۔

الیکشن کمشنر جے ایس ساہاریہ نے کہاکہ ان پارٹیوں انکم ٹیکس ریٹرن اور آیڈیٹ اکاونٹ پیش نہیں کیا۔ایم آئی ایم کے مہاراشٹر اسمبلی میں دوممبران ہیں۔۱۹۱؍پارٹیوں میں سے آرپی آئی کھوبڑگڑے پر بھی پابندی عائد کردی ہے۔فی الحال۳۵۹؍سیاسی پارٹیاں رجسٹرڈ ہے اور ۱۷؍پارٹیاں کو مکمل منظوری حاصل ہے۳۲۶؍ پارٹیاں کو دستاویزات پیش کرنے کے لیے نوٹس دیا گیا تھا۔ان پارٹیوں نے کئی مرتبہ نوٹس دینے کے بعد بھی کوئی کارروائی نہیں کی گئی ۔اس لیے یہ اقدام کیا گیا ہے۔

Rate this item
(0 votes)

Related items