حیاتیاتی سائنس میں حیرت انگیز پیشرفت

  • Saturday, 10 May 2014 05:55
  • Published in سائنسی
  • Read 2290 times
حیاتیاتی سائنس میں حیرت انگیز پیشرفت All images are copyrighted to their respective owners.

 سائنسی شعبہ جات میں رونما ہونے والی حیرت انگیز ترقیاں واقعی تہلکہ خیز ہیں اور یہ ترقیاں کسی بھی شعبے میں اس قدر نمایاں نہیں جتنی کہ

حیاتیاتی سائنس میں ہے کیونکہ زندگی اور اس میں کارفرما دیگر کیمیائی عوامل کی سمجھ بوجھ میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے۔ سائنسدان بھی اس تگ و دو میں مصروف ہیں کہ یہ سمجھا جائے کہ قدرت کس اچھوتے انداز سے مختلف عوامل سر انجام دیتی ہے اور پھر سائنسدان اسی سمجھ بوجھ کے بل بوتے پر بیماریوں سے نبردآزما ہونا اور زرعی پیداوار میں اضافے کے طریقے اخذ کرتے ہیں یہ عمل حیاتیاتی نقل (biomimicry)کہلاتا ہے۔

اس سلسلے میں چند حیرت انگیز مثالیں نظرقارئین ہیں۔جامعہ کونسٹانزجرمنی کے محققین کے مطابق پھلوں کی مکّھی کی حسِ بوکے ذریعے کینسر خلیات کی نشاندہی کی جا سکتی ہے اور انہیں دیگر تندرست خلیات سے علیحدہ شناخت بھی کیا جا سکتا ہے دراصل عام تندرست خلیات اور کینسر زدہ خلیات میں سے خارج ہونے والی بو میں کافی واضح فرق ہوتا ہے۔ یہ فرق ان دونوں اقسام کے خلیات میں رونما ہونے والی مختلف حرکات کی بنا پر ہوتا ہے۔اس مقصد کے حصول کیلئے ان مکّھیوں کے اینٹینا کے موصولاتی خلیوں میں جینیاتی تبدیلی کی گئی ہے اس طرح کہ کسی بھی کینسر خلئے کی موجودگی میں یہ اینٹینے مخصوص انداز سے چمکتے ہیں۔

Samuel Achilefu جامعہ واشنگٹن، امریکہ اور ان کے ساتھیوں نے کینسر خلیات کی شناخت پر جرّاحی کے ذریعے ان خلیات کو نکالنے کے عمل کو مزید آسان بنانے کے لئے ایک عینک نما آلہ دریافت کیا ہے جو کہ آپریشن کے دوران سرطانی خلیات کی نشاندہی میں مدد کرتا ہے اس کیلئےخلیات میں داخل کیا جاتا ہے جس کی وجہ سے سرطانی خلیات الگ سے چمکتے ہوئے دکھائی دیتے ہیں۔ اس آلے کا استعمال نہایت ہی آسان ہے اور جرّاحی کے دوران ہاتھ بھی خالی رہتے ہیں۔ سفید روشنی اور انفرا ریڈ روشنی کی بیک وقت موجودگی میں اس آلے سے دیکھا جا سکتا ہے اور ساتھ ہی ویڈیو اور گرافک تصاویر بھی دیکھی جا سکتی ہیں۔

طبّی آلات کی دریافتوں کی صف میں ایک اور دلچسپ دریافت 3D چھپائی ہے۔3D چھپائی کافی آلات کی تیّاری میں استعمال ہو رہی ہے۔ خصوصاً گزشتہ تین سالوں میں اس مد میں ہونے والے کام کا تخمینہ تقریباً 3 ارب امریکی ڈالر لگایا گیا ہے جو کہ سالانہ 30% کی شرح سے بڑھ رہا ہے۔چین نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ 500 ملین امریکی ڈالر کی سرمایہ کاری سے 10 تحقیقاتی ادارے قائم کرے گا جو کہ 3D چھپائی میں مہارت حاصل کریں گے۔3D چھپائی میں کسی بھی آلے یا چیز جس کی بھی چھپائی کرنی ہے اس کا 3D خاکہ پہلے کمپیوٹر پر تیّار کیا جاتا ہے پھر کمپیوٹر کو مشین سے منسلک کر دیا جاتا ہے جو کہ اس3D خاکے کے مطابق دھات یا پلاسٹک کے پرزوں کو تشکیل دیتا ہے۔3D پرنٹر اب مختلف اقسام کی چیزوں کی چھپائی کے لئے استعمال ہو رہے ہیں جن میں مشینی پرزہ جات سے لے کر تعمیراتی سامان تک اور کپڑا سازی سے لے کر آگ بجھانے کے آلات تک شامل ہیں۔

3D چھپائی صنعتوں کیلئے نہایت کارآمد ثابت ہو سکتی ہے جیسا کہ بائیو میڈیکل آلات کی تیّاری۔ 2013ء میں چینی سائنسدان اس چھپائی کے ذریعے جگر، گردے اور کان وغیرہ زندہ خلیات سے تیّار کرنے میں کامیاب ہو گئے ہیں۔ جامعہ Hangzhou Dianzi کے محققین 3D بائیو پرنٹر ایجاد کرنے میں کامیاب ہو گئے ہیں جو کہ ایک چھوٹا سا جگراور کان کی ہڈّی زندہ خلیات پر3D پرنٹ کر سکتاہے۔ گزشتہ سال جامعہ Hasselt کے سائنسدان ایک بیلجین عورت کے لئے 3D چھپائی کے ذریعے اس کی ٹوٹی ہوئی جبڑے کی ہڈّی بنا کے تبدیل کرنے میں کامیاب ہو گئے ہیں جس کے لگنے کے بعد اب وہ بات کر سکتی ہے، کھانا کھا سکتی ہے اور صحیح طرح سے سانس بھی لے سکتی ہے۔مارچ 2014ء میں سوان سی میں ایک موٹر سائیکل سوار کا چہرہ حادثے کی وجہ سے بالکل مسخ ہو گیا تھا اسے بھی 3D چھپائی کے ذریعے دوسرا چہرہ لگا دیا گیا۔

3D چھپائی کے ذریعے امریکہ میں ایک 14ماہ کے بچّے کی دل کے آپریشن کے دوران جان بچا لی گئی۔بچّے کے دل میں چار نقائص تھے اور ڈاکٹروں کو فوری طور پر ماڈل دل کی ضرورت تھی۔ جامعہ Louisville کےJ.B Speed School of Engineering نے اس آپریشن کا پلان بنایا اور کامیابی سے پایۂ تکمیل تک پہنچایا۔3D چھپائی انسانی بیرونی ڈھانچے 43(exoskeleton) میں بھی استعمال ہو رہی ہے جس نے ایک مفلوج خاتون کو چلنے پھرنے کے قابل بنا دیا۔بیرونی ڈھانچے ،اکثر سائنسی تخیّلاتی فلموں میں دکھائے جاتے ہیں بطور میکانیکی لباس (mechanical suits) جن میں غیر مرئی طاقت ہوتی ہے جو پہننے والے کو اضافی طاقت دیتا ہے۔یہ سب آج حقیقت بن چکا ہے۔ امریکی دفاعی ادارہ DARPA اور Lockheed نے سپاہیوں کے لئے ایسے ہی بیرونی ڈھانچے تیّار کئے ہیں تاکہ ان کی طاقت کو دوبالا کیا جا سکے اور وہ پھرتی سے وزنی سامان اٹھا کر اور چیزوں کو ایک جگہ سے دوسری جگہ لے جا سکیں اور دیگر کام بغیر تھکاوٹ کے کر سکیں۔

Rate this item
(1 Vote)
  • Last modified on Friday, 30 May 2014 19:34
  • font size